Page Nav

Grid

GRID_STYLE
FALSE

تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں

 تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں  تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں عمر بن عبدالعزیز نے اپنے ایک قاصد کو شاہ روم کے پاس کسی کام سے بھیجا قا...

 تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں

all Muslims are one

 تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں

عمر بن عبدالعزیز نے اپنے ایک قاصد کو شاہ روم کے پاس کسی کام سے بھیجا قاصد پیغام پہنچانے کے بعد محل سے نکلا اور ٹہلنے لگا ٹہلتے ٹہلتے اسکو ایک جگہ سے تلاوت  کلام پاک سنائی دی آواز کی جانب گیا تو کیا منظر دیکھا 

کہ ایک نابینا شخص چکی پیس رہا ہے اور ساتھ میں تلاوت بھی کر رہا ہے آگے بڑھ کے سلام کیا جواب نہیں ملا دوبارہ سلام کیا جواب نہیں ملا تیسری بار سلام کیا نابینا شخص نے سر اٹھا کر کہا شاہ روم کے دربار میں سلام کیسے قاصد نے کہا پہلے یہ بتا کہ شاہ روم کے دربار میں خدا کا کلام کیسے؟ 

اس نے بتایا کہ کہ وہ یہاں کا مسلمان ہے بادشاہ نے مجبور کیا کہ اسلام چھوڑ دے انکار پے سزا کے طور پے دونوں آنکھیں نکال دی گئ اور چکی پیسنے پے لگا دیا معاملات طے کرنے کے بعد قاصد واپس آیا تو عمر بن عبد العزیز کے سامنے اس قیدی کی بات بھی رکھ دی. 

"کیا لوگ تھے وہ بھی "عمر بن عبد العزیز نے کوئی مذمتی بیان جاری نہیں کیا، پانچ یا دس منٹ کی خاموشی اختیار کرنے کا حکم نہیں دیا اجلاس نہیں بلایا
 
بلکہ کاغذ قلم لیا اور یہ تحریر شاہ روم کو لکھ بھیجی۔

اے شاہ روم میں نے سنا ہے کہ تیرے پاس ایک مسلمان قید ہے اور تو اس پے ظلم روا رکھتا ہے میری یہ تحریر تیرے پاس پہنچنے کے بعد تو نے اس قیدی کی رہائی کا پروانہ جاری  نہیں کیا  تو پھر ایسے لشکر جرار کا سامنا کرنا جسکا پہلا فرد تیرے محل میں ہوگا اور آخری میرے دربار میں۔

#سوال یہ ہےکہ ایک اسلامی مملکت کے سربراہ  نےاتنا بڑا قدم کیوں اٹھایا ایک شخص کے لئے جو اسکے ملک کا باشندہ بھی نہیں اپنی سالمیت خطرے میں ڈال دی پتہ ہے کیوں؟ کیونکہ انہیں معلوم تھا 

کہ اگر ایک #مسلمان کی حرمت خانہ کعبہ سے بڑھ کر ہے تو جغرافائی حدود سے بھی بڑھکر ہے کیونکہ انہیں معلوم تھا کہ #نبیعلیہالصلاۃ_والسلام نے صرف ایک صحابی حضرت عثمان بن عفان کے لئے پندرہ سو صحابہ کرام سے موت پہ بیعت لی تھی، انہیں معلوم تھا.

کہ ہادی عالم یہ فرما گئے ہے کہ تمام #مسلمان ایک #جسم کی #مانند ہے، ایک حصے پے تکلیف ہوتی ہے تو تمام جسم #تڑپتا ہے انہیں معلوم تھا کہ نحن الامہ ہم ایک امت ہے.

اور جب سے یہ #نظریہ ہم سے اٹھا ہے #ذلیل_ورسواء ہورہے ہے، آج باوجود اسکے کی دنیا میں ڈیڑھ ارب مسلمان موجود ہے 

لیکن #شامی بچی آخری #ہچکیاں لیتی ہوئی کہتی ہے میں #رب کو جا کر سب کچھ بتاؤنگی.

#عراق جنگ میں ایک لڑکی جان بچانے کے لئے بھاگتے ہوئے صحافی سے فریاد کرتی ہے کہ انکل میری #تصویر نہیں لینا میں بے #حجاب ہوں.

ایک #فلسطینی بچہ #بھوک کی شدت سے نڈھال فریاد کر رہا ہے کہ اے اللہ مجھے جنت بیھج دے مجھے بہت بھوک لگی ہے 

صرف 7 کروڑ آبادی کا حامل ایک #ملعون_ملک آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں #گستاخی کرتا ہے یہ سب کیوں ہورہا ہے کیونکہ انہیں معلوم ہے  ہم میں سے کوئی ہاکستانی ہے کوئی ہندوستانی کوئی سعودی اماراتی اور کوئی ملائیشن #مسلمان ہوتے تو ایک دوسرے کے لئے تڑپ ہوتی.


Free Islamic Apps


Free Learning Apps

TAGS: #DroidReaders.com HERE #iAhmedSheraz

No comments

Contact form

Name

Email *

Message *